1

دنیا کی بلند ترین چوٹیوں کو بغیر آکسیجن سر کرنے اور پہاڑوں کا سینہ چیرنے والا عالمی شہرت یافتہ پاکستانی کوہ پیما حسن سد پارہ انتقال کرگیا

دنیا کی بلند ترین چوٹیوں کو بغیر آکسیجن سر کرنے اور پہاڑوں کا سینہ چیرنے والا عالمی شہرت یافتہ پاکستانی کوہ پیما حسن سد پارہ انتقال کرگیا

راولپنڈی ( پرائم نیوز) عالمی شہرت یافتہ پاکستانی کوہ پیما حسن سد پارہ انتقال کر گئے ہیں. تفصیلات کے مطابق حسن سدپارہ کچھ عرصے سے کینسرکے موذی مرض میں مبتلا تھے اور راولپنڈی کے ایک نجی اسپتال میں زیر علاج تھے.

سکردو کے قریب سدپارہ سے تعلق رکھنے والے حسن سد پارہ نے کوہ پیمائی کا آغاز 1994 میں کیا اور اسی سال پاکستان کی بلند ترین چوٹی کے ٹو سر کرنے کا اعزاز حاصل کیا. اس کے بعد حسن نے پیچھے پڑ کر نہ دیکھا اور حکومت کی طرف سے پذیرائی نہ ملنے کے باوجود 1999 میں قاتل پہاڑ کے نام سے مشہور نانگا پربت 2006 میں گیشا برم ون اور گیشا برم ٹو 2007 میں براڈ پیک کو سر کرنے کا کارنامہ انجام دیا. 2007 تک انہوں نے پاکستان میں واقع 8000 میٹر سے بلند 5 چوٹیاں آکسیجن کی مدد کے بغیر سر کر لی تھیں. آخر کار 2011 میں انہوں نے دنیا کی بلند ترین چوٹی ماؤنٹ ایوریسٹ سر کرنے کا اعزاز اپنے نام کر لیا اور نذیر صابر کے بعد یہ اعزاز حاصل کرنے والے دوسرے پاکستانی بنے. وہ پاکستان میں 8000 میٹر سے بلند 5 چوٹیوں اور ماؤنٹ ایوریسٹ سمیت 6 چوٹیاں سر کرنے والے واحد پاکستانی ہیں. کوہ پیمائی کے شعبے میں اعلیٰ کارکردگی پر حکومت پاکستان نے حسن سدپارہ کو 2008ء میں تمغہ حسن کارکردگی سے بھی نوازا تھا.

اپنا تبصرہ بھیجیں