08

سپر مون چاندسے متعلق ایک اور خطرناک تجویز

سپر مون چاندسے متعلق ایک اور خطرناک تجویز

کوئٹہ (پرائم نیوز) پاکستان میں آج سپر مون دکھا جا سکے گا، ستر سال بعد دکھائی دینے والے سپر مون نے بلوچستان کے ساحلی علاقوں کے لئے خطرے کی گھنٹی بجادی ہے۔ ستر سال بعد دنیا کے کئی ممالک میں سپر مون کا نظارہ ہوگا، سپر مون کہلانے والا یہ چاند زمین کے انتہائی قریب آجائے گا، زمین اور چاند کے درمیان فاصلہ انتہائی کم ہوگا۔ وفاقی وزارت سائنس وٹیکنالوجی نے سپرمون الرٹ جاری کیا ہے، جس میں بلوچستان کے ساحلی علاقوں کیلئے اور قلات، مکران ، گوادر ، لسبیلہ کے کمشنرز اور ڈپٹی کمشنر کیلئے الرٹ جاری کیا گیا ہے۔ جس کے مطابق سپرمون سے زمین کے کشش ثقل پر اثر پڑے گا، سپرمون کے باعث سمندر کی لہروں میں غیر معمولی اتار چڑھاؤ پیدا ہوگا، لہروں میں اتار چڑھاؤ کی صورتحال 48 سے 72گھنٹے تک جاری رہ سکتی ہے، جس کے باعث ساحلی علاقوں پر رہنے والے عوام کے لیے محتاط رہنے کی ہدایت کی گئی ہے۔ اس سال نظر آنے والا سپر مون عام چاند سے 14 فیصد بڑا اور 30 فیصدزیادہ روشن ہوگا یعنی کہ چاند زمین کے جتنا قریب اس مہینے آئے گا اتنا گزشتہ ستر سالوں میں نہیں آیا۔ امریکی خلائی تحقیقاتی ادارے ناسا کا کہنا ہے کہ 14 نومبر کو ہونے والا یہ سپرمون نہ صرف 2016 کا سب سے بڑا چاند ہوگا بلکہ 21 ویں صدی میں ہونے والا اب تک کا سب سے بڑا سپر مون ہوگا۔ غیر معمولی طور پر اتنے خوبصورت چاند کا نظارہ دوبارہ دیکھنے کے لیے پچیس نومبر دوہزارچونتیس تک انتظار کرنا ہوگا۔ بین الاقوامی وقت کے مطابق یہ اس سال کا سپر مون دوپہر ایک بج کر باون منٹ پر ہوگا یعنی کے پاکستان میں اس وقت شام چھ بج کر باون منٹ ہورہے ہوں گے اور موسمِ سرما کی وجہ سے اندھیرا چھا چکا ہوگا.

اپنا تبصرہ بھیجیں