1

مظاہرین نےٹرمپ کو صدر ماننے سے انکار کر دیا… بڑا فیصلہ کر لیا گیا

مظاہرین نےٹرمپ کو صدر ماننے سے انکار کر دیا… بڑا فیصلہ کر لیا گیا

واشنگٹن ( پرائم نیوز) ریپلکن پارٹی کے امیدوار ڈونلڈ ٹرمپ کے صدر بنتے ہی امریکا میں مظاہرے شروع ہو گئے اور ہزاروں افراد نے ٹرمپ ٹاور کا گھیراؤ کر کے نو منتخب صدر کے منتخب ہونے والے متنازع ترین صدر ٹرمپ کے خلاف امریکی ریاستوں اوریگا، نیو یارک، ٹیکساس، ٹینیسی میں بڑے پیمانے پر مظاہرے شروع ہو گئے ہیں. نیو یارک میں ہزارو افراد ٹرمپ ٹاور کے گرد جمع ہوئے اور ڈونلڈ ٹرمپ کے خلاف شدید نعرے لگائے گئے، ٹرمپ ان کے صدر نہیں، جبکہ مظاہرین نے ٹرمپ کے اشتعال انگیز بیانات پر بھی تنقید کی، امریکی عوام نے ہاتھوں میں بینرز اور پلے کارڈز اٹھا رکھے تھے جن پر لکھا ہوا تھا کہ وہ نفرت نہیں بلکہ محبت چاہتے ہیں. مظاہرین نے مطالبہ کیا کہ ٹرمپ تارکین وطن کو روکنے کی کوشش نہ کریں، وہ اپنی سرحدوں پر کوئی دیوار نہیں چاہتے اور ایسی کسی بھی کوشش کو عوام ناکام بنا دیں گے.

مظاہرین نے کہا ہے کہ عوام متحد ہو کر کچھ بھی کر سکتے ہیں، ادھر فیملی ڈلفیا میں مظاہرین سٹی ہال کے باہر جمع ہوئے اور ٹرمپ کے خلاف نعرے بازی کی، ٹرمپ اپنے متنازع بیانات کی وجہ سے عوام کی بڑی تعداد میں غیر مقبول ہیں اور ان کی کامیابی سے اعتدال پسند حلقوں کو صدمہ پہنچا ہے. اس کے علاوہ سان فرانسسکو میں بھی طلبہ نے احتجاجاً کلاسوں کا بائیکاٹ کر دیا اور سڑکوں پر آکر ڈونلڈ ٹرمپ کے خلاف مظاہرہ کیا. مظاہرین کی طرف سے ڈونلڈ ٹرمپ کے پتلے بھی نذر آتش کئے گئے. شکاگو کے ایک رہائشی نے کہا ہے کہ میرا خیال ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ ملک کو تقسیم کر دیں گےاور نفرت کو ہوا دیںگے اور ہماری آئینی ذمہ داری ہے کہ اسے قبول نہ کیا جائے.

دوسری طرف امریکی مسلمان رہنما امید کرتے ہیں کہ ٹرمپ امریکی آئین میں شہریوں کو دیے گئے حقوق کا خیال رکھیں گے اور ملک کی ترقی کیلئے تمام طبقوں کو ساتھ ملا کر چلیں گے. تارکین ون بھی ٹرمپ کی ممکنہ پالیسیوں پر خوف کا شکار ہیں، دوسری طرف لندن میں بھی ٹرمپ کے خلاف احتجاج کیا گیا ہے.

اپنا تبصرہ بھیجیں