1

100 روپے کا کارڈ لوڈ کرنے پر کتنا بیلنس آئے گا؟ جان کر خوشی سے جھوم اٹھیں گے

100 روپے کا کارڈ لوڈ کرنے پر کتنا بیلنس آئے گا؟ جان کر خوشی سے جھوم اٹھیں گے

اسلام آباد ( پرائم نیوز) ایوان بالا کی ذیلی برائے تفقیض کردہ اختیارات نے حکومت کو ہدایت جاری کر دی ہے کہ 1 لاکھ روپے سے کم آمدن والے افراد کو 100 روپے کا کارڈ خریدنے یا ریچارج کرنے پر 25 روپے کے ٹیکس کی کٹوتی سے دور رکھا جائے. کمیٹی کنوینر سینیٹر دائودخان اچکزئی نے پی ٹی اے کو ہدایت جاری کی ہے کہ وہ موبائل کمپنیوں کو اس بات سے آگاہ کرے کہ موبائل سم جاری کرتے وقت صارف کی تمام تفصیلات حاصل کی جائیں تاکہ جن صارفین کی آمدنی 1 لاکھ سے کم ہے انہیں ٹیکس کی کٹوتی سے بچایا جا سکے. انہوں نے اس حوالے سے مجوزہ قانون سازی پر بریفننگ کیلئے اگلے اجلاس میں کیبنٹ ڈویژن اور وزارت انفارمیشن ٹیکنالوجی کو بھی طلب کیا ہے.

جمعہ کوکمیٹی کا اجلاس کمیٹی کے کنیویز سینیٹر دائود خان اچکزئی کی صدارت میں پارلیمنٹ ہاؤس منعقد ہوا. اجلاس میں سینیٹرز کلثوم پروین، جاوید عباسی، ایڈیشنل سیکرٹری وزارت آئی‌ٹی کے علاوہ اعلی افسران بھی شامل تھے. سینیٹر جاوید عباسی نے ٹیرف کے میکنزم اور پی ٹی اے ایکٹ کے نیچے ریگولینشنز اور پی ٹی اے کی انتظامی اور مالی حیثیت کے بارے میں سوال کیا ہے.

سینیٹر کلثوم پروین کا کہنا ہے کہ کمیٹی کا مقصد رولز ریگولیشنز کا ایکٹس کے ساتھ متصادم نہ ہونا دیکھنا چاہتے ہیں. کنوینر کمیٹی سینیٹر دائود خان اچکزئی نےمعاملات کا تفصیلی جائزہ لینے کیلئے اگلے اجلاس میں کیبنٹ ڈویژن اور وزارت انفارمیشن ٹیکنالوجی کی شرکت کی بھی ہدایت دی. پی ٹی اے حکام نے کمیٹی کو بریفننگ دیتے ہوئے اس بات سے مطلع کیا ہے کہ پی ٹی اے خود مختار ادارہ ہے.

ٹیلی کارمارکیٹ کے تحت 22 ریگولیشن بنائے گئے ہیں اور 19 ترامیم کی گئی ہیں. پی ٹی اے نے ایف بی آر کے ساتھ ٹیکسز کے بارے میں متعدد اجلاس منعقد کئے ہیں. پی ٹی اےکی تجویز پر ایف بی آر کنسلٹنٹ مقرر کر دیا گیا ہے، ایس ای سی پی کے تحت کمپنیاں مالی سال میں 120 دن میں آڈت کرانے کی پابند ہے. مسابقت کے رولز پر کام پورا ہو چکا ہے، رولز ریگولیشن کا گزٹ نوٹیفیکیشن ہو چکا ہے. پی ٹی اے کو رولز ریگولیشنز میں ترامیم کی ضرورت نہیں، ایکٹ میں ترامیم وزارت کے ذریعے پارلیمنٹ کی منظوری سےکی جا سکتی ہے. صارف کے تحفظ کیلئے ایک شق میں چار دفعہ ترمیم کی گئی ہےجن میں صارف کے حقوق، شکایات کے میکنزم، آپریٹرز، سروس بن کرنے کا میکنزم اور انعامی سکیم کو شامل کیا گیا ہے.

اپنا تبصرہ بھیجیں