1

احتساب مارچ، لاہور کے کون کونسے راستے بند کر دیے گئے؟ جانئے تفصیلات

احتساب مارچ، لاہور کے کون کونسے راستے بند کر دیے گئے؟ جانئے تفصیلات

لاہور ( پرائم نیوز) پاکستان تحریک انصاف کے احتساب مارچ کی وجہ سے پولیس نے شاہدرہ سے گورنر ہاؤس تک بیشتر راستوں کو رات سے ہی کنٹینرز لگا کر سیل کر دیا ہے جس سے شہری کافی مشکلات میں مبتلا رہے، خاردار تاریں لگا کر پیدل گزرنے کے راستے بھی بند کر دیے ہیں جس پر عوام پی ٹی آئی اور حکومت کو کوستے رہے، راستہ نہ ملنے کی وجہ سے شہریوں اور پولیس اہلکاروں میں تلخ کلامی بھی ہوئی اور ہاتھا پائی کے واقعات بھی سامنے آئے، راستوں کی بندش کی اطلاعات پر شہریوں نے اپنی سرگرمیاں آج کے دن کیلئے معطل کردی ہیں.

تفصیلات کے مطابق پولیس کی جانب سے تحریک انصاف کے احتساب مارچ کے شرکاء کی حفاظت اور کارکنوں کے طے شدہ مقام سے آگے بڑھنے کے کسی بھی واقعہ کو روکنے کیلئے شاہدرہ سے گورنز ہاؤس تک تمام سڑکوں پر کنٹینرز کھڑے کر کے سیل کر دیا گیا ہے. پولیس کی طرف سے مال روڈ پر واقع 90 شاہراہ قائداعظم اور گورنر ہاؤس سمیت متعدد اہم سڑکوں کے باہر کنٹینرز کھڑے کر دیے ہیں جس سے عوام کافی مشکلات کا شکار ہیں. پولیس کی طرف سے شاہدرہ سے مال روڈ کی طرف سے آنےوالی سڑکوں کے مختلف مقامات پر کنٹینرز اور ملحقہ راستوں کو خاردارتاریں لگا کر بند کر دیا ہے جس سے شہری شدید پریشانی میں مبتلا ہیں. شہری راستہ نہ ملنے کی وجہ سے ادھر ادھر خوار ہو رہے ہیں. مال روڈ پر گورنر ہاؤس کے سامنے دونوں راستوں پر کنٹینرز کے ذریعے راستے بند کرنے پرشہریوں نے احتجاج کرتے ہوئے حکومت اور پی ٹی آئی دونوں کے خلاف نعرے لگائے.

شہری ایک دوسرے کو راستوں کی بندش کی اطلاعات بھی دیتے رہے جس کے بعد اکثریت نے اپنی باقی ماندہ سرگرمیاں معطل کر دی ہیں اور گھروں میں موجود رہے. تحریک انصاف وسطی پنجاب کے صدر عبدالعلیم خان اور مرکزی رہنما جمشید اقبال چیمہ نے لاہور بھر میں راستوں کی بندش کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت نے بوکھلاہٹ میں کنٹینرز لگا کر پورے شہر کو قید خانے میں بدل کر رکھ دیا ہے. شہریوں کی آزاد نقل و حمل پر قد غن لگانا انتہائی شرمناک عمل ہے. ان کا کہنا ہے کہ حکمران جتنی ڈھٹائی اور بے شرمی کا مظاہرہ کریں گے عوام اتنے ہی جوش و جذبے کے ساتھ باہر نکلیں گے. حکمران پر امن احتجاج کی راہ میں رکاوٹیں کھڑی کر کے اپنی قبر کھود رہے ہیں.

اپنا تبصرہ بھیجیں