14

سیلفی لینے کے شوق میں لڑکی اپنے ساتھ والدین کی جان بھی لے ڈوبی، متاثرہ خاندان کا تعلق کس شعبے سے تھا؟ جان کرہرآنکھ اشک بار

سیلفی لینے کے شوق میں لڑکی اپنے ساتھ والدین کی جان بھی لے ڈوبی، متاثرہ خاندان کا تعلق کس شعبے سے تھا؟ جان کرہرآنکھ اشک بار

پشاور ( پرائم نیوز) پاکستان کے شمالی علاقہ جات میں سلیفی لینے کے شوق میں 11 سالہ بچی دریا میں جا گری جبکہ بچی کے والدین بھی اپنے لخت جگر کو بچاتے بچاتے دریا میں ڈوب گئے. یہ واقعہ خیبر پختونخواہ سے گزرنے والے کہنار دریا پر بیسیان گاؤں کے قریب ایک ہی سیاحتی مقام پر پیش آیا. مقامی پولیس آفیسر ارشد خان نے کہا ہے کہ 11 سالہ صفیہ عاطف نامی لڑکی نے دریا کے کنارے سیلفی لینے کی کوشش کی جس پر وہ پھسل کر دریا میں جا ڈوبی.

بیٹی کو ڈوبتا دیکھ کرصفیہ کی والدہ شازیہ آصف نے بھی دریا میں چھلانگ لگا دی لیکن وہ بھی دریا کے ساتھ بہہ گئیں. بیٹی اور اہلیہ کو دریا میں بہتا دیکھ کر والد آصف حسین سے بھی رہا نہ گیا اور ان کو بچانے کیلئے وہ بھی دریا میں کود پڑے لیکن تینوں ہی موت کے گھاٹ اتر گئے.

پولیس آفیسر نے کہا ہے کہ بیٹی اور اس کی والدہ کی لاشوں کو دریا سے نکال لیا گیا ہے جبکہ عاطف حسین کی لاش کی تلاش ابھی تک جاری ہے. ان کا کہنا ہے کہ لڑکی کے والدین صوبہ پنجاب میں ڈاکٹری کے شعبہ سے تعلق رکھتے تھے اور اہل خانہ کے ساتھ چھٹیاں گرازنے آئے ہوئے تھے. ان کے لواحقین میں 9 سالہ بیٹی اور ایک 6 سالہ بیٹا بھی شامل ہیں جنہیں مقامی انتظامیہ نے حفاظتی تحویل میں لے لیا ہے.

اپنا تبصرہ بھیجیں