12

کی بورڈ پر حروف تہجی ترتیب کے مطابق کیوں نہیں ہوتے؟ ماہرین نے حیرت انگیز وجہ بتا دی

کی بورڈ پر حروف تہجی ترتیب کے مطابق کیوں نہیں ہوتے؟ ماہرین نے حیرت انگیز وجہ بتا دی

لاہور ( پرائم نیوز) موجودہ دور میں تقریباً تمام افراد روزانہ ہی کی بورڈ کا استعمال کرتے ہیں. کوئی دفتر کے لیپ ٹاپ پر استعمال کرتا ہے تو کوئی موبائل اورگھروں میں. مگرکبھی کسی نے اس بات پر غور کیا ہے کہ کی بورڈ حروف تہجیّ کی ترتیب سے کیوں نہیں ہوتے؟ یعنی کہ اے کے بعد بی ہونے کی بجائے ایس کیوں لکھا گیا ہے؟ اس طرح کے سوالات کی وجہ اب سامنے آ گئی ہے.

بتایا جاتا ہے کہ موجودہ کی بورڈ کو کیوٹری کہا جاتا ہے جوکی بورڈ کی اوپر والی لائن کی طرف کے 6 الفاظ کو کی بورڈ کے لے آؤٹ میں حروف تہجی کی ترتیب کی بجائے بے ترتیب کیوں رکھا گیا ہے؟ دنیا کے پہلے کی بورڈ کاپیٹنٹ 1868ء میں‌درج کیا گیا تھا جس کا کی بورڈ پیانو کی طرح انگریزی حروف تہجی کے مطابق تھا. مگر اس مشکل کو مد نظر رکھتے ہوئے کرسٹوفرشولز نے کیورٹی کی بورڈ تیار کیا، جس میں زیادہ استعمال ہونے والے الفاظ کو مختلف مقامات پر منتقل کر دیا گیا تاکہ مکینیکل مسئلوں سے بچا جا سکے.

شولزنے اس زمانے میں ایک کمپنی ریمنگٹن کے ساتھ معاہدہ طے کیا تھا جس نے اس کی بورڈ کو اپنے مقبول ٹائپ رائیٹر ریمنگٹن نمبر 2 کا حصہ بنایا. کی بورڈ کی اوپر والی لائن میں وہ تمام الفاظ موجود ہیں جو کی بورڈ لکھنے کیلئے استعمال کیے جاتے ہیں.

تاہم 2 تحقیق کرنے والوں نے موجودہ کی بورڈ کے حوالے سے ایک مختلف خیال کا اظہار کیا ہے.ان کا کہنا ہے کہ شروع میں ٹائپ رائیٹرزٹیلی گراف آپریٹرز استعمال کرتے تھے جو مورس کوڈ میں موصول پیغام میں لکھتے ہوئے صحیح حروف تہجی پر مبنی کی بورڈ ٹائپ کرتے ہوئے الجھن کا شکار ہوتے تھے. یہی وجہ ہے کہ کی بورڈ کو اس طرح کے ڈیزائن میں بنایا گیا ہے. اب دونوں میں سےجو بھی وجہ ہو لیکن کی بورڈ کی ترتیب کمپیوٹرز سے لے کر اسمارٹ فونز کیلئے بھی متعارف کرائی جا چکی ہے.

اپنا تبصرہ بھیجیں